مولانا سمیع الحق قتل: جائے وقوعہ پر 5 افراد موجود تھے، تحقیقاتی رپورٹ

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/11/Sami-Ul-Haq-Investigation-Isb-Pkg-15-11.mp4"][/video]

جمعیت علمائے اسلام (س) کے امیر مولانا سمیع الحق کے قتل کیس کی تحقیقات میں نئی پیشرفت سامنے آئی ہے، واردات کے وقت جائے وقوعہ پر پانچ لوگوں کی موجودگی کا انکشاف ہوا ہے، جبکہ پولیس کو مولانا کے سیکرٹری کی بھی تلاش ہے۔

راولپنڈی میں 2 نومبر کو قاتلانہ حملے میں مولانا سمیع الحق کی شہادت کی تحقیقات جاری ہیں۔ اس حوالے سے تفتیشی ٹیم کو نیا سِرا مل گیا ہے۔

انکشاف ہوا ہے کہ واردات کے وقت جائے وقوعہ پر 5 افراد موجود تھے۔

پولیس کو مقتول کے خون کے نمونوں کی رپورٹ بھی موصول ہو گئی۔

مزید پڑھیے: مولانا سمیع الحق کے سیکریٹری کو شامل تفتیش کرنے کا فیصلہ

مولانا کے کمرے میں موجود واش روم سے ملنے والا خون مولانا سمیع الحق کے خون سے میچ نہیں ہوا۔

حراست میں لئے گئے مشکوک افراد میں سے 7 کے نمونے ڈی این اے کیلئے فرانزک لیبارٹری لاہور بھیج دیئے گئے ہیں۔

شامل تفتیش ہونے کے حکم کا اثر نہ ہوا، مولانا سمیع الحق کے سیکرٹری احمد شاہ غائب ہوگئے۔ راولپنڈی پولیس نے احمد شاہ کو بھیجے گئے نوٹس کی تعمیل کیلئے خیبر پختونخوا پولیس سے رابطہ کر لیا۔

پولیس کے مطابق ہائی پروفائل قتل کیس میں اب تک 22 افراد کے بیانات ریکارڈ کئے گئے ہیں۔

rawalpindi police

Maulana Samiul Haq

murder investigations

Tabool ads will show in this div