کرکٹروزیراعظم کے دورمیں ہاکی ٹیم کے پاس ورلڈ کپ کھیلنے کیلئے رقم نہیں

فنڈزنے ملنے پر پاکستاني ہاکي ٹيم کي ورلڈ کپ ميں شرکت مشکوک ہوگئي۔ ہاکی فیڈریشن کی درخواست پرمسائل کے حل کے لیے چیئرمین پی سی بی آج وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کریں گے۔ ٹیم ورلڈ کپ کھیلنے نہ گئی تو ایک کروڑ جرمانہ بھرنا پڑے گا۔

ورلڈ کپ ہاکي ٹورنامنٹ کاآغاز 28 نومبر سے ہو رہا ہے لیکن پاکستان ہاکي فيڈريشن مالي بحران ميں گھری ہے۔ ٹیم کو ہاکی ورلڈ کپ میں شرکت کیلئے 20 نومبرکو بھارت روانہ ہونا ہے لیکن تاحال ہاکی فیڈریشن کو فنڈز نہیں ملے۔ رقم نہ ملنے سے ٹیم کی ورلڈ کپ میں شرکت پرسوالات اٹھ رہے ہیں۔

ہاکي کھلاڑٰيوں کي مشکلات ميں اضافے کے بعد ہیڈکوچ توقیرڈارنےچيئرمين پاکستان کرکٹ بورڈ احسان ماني سے مدد مانگ لی۔ ٹيلي فونک رابطے میں توقیر ڈار نے درخواست کی کہ پی سی بی مالي مسائل کے ليے مددکرے۔

توقیرڈارنے بتایا کہ چیئرمین پی سی بی نے مالی مدد سے معذرت کرتے ہوئے کھلاڑیوں کےمسائل وزیراعظم تک پہنچانےکی یقین دہانی کرائی ہے۔

قومی ٹیم نے اگر ہاکی ورلڈ کپ میں شرکت نہ کی انٹرنیشنل ہاکی فیڈریشن کی جانب سے ایک کروڑروپے جرمانہ عائد کیا جائے گا جبکہ ہوٹل کی بکنگ کے لیے بطور ایڈوانس جمع کرائے جانے والے 25 لاکھ روپےبھی ناقابل واپسی ہوں گے۔

ہاکی ورلڈ کپ 28 نومبر سے 16 دسمبر تک بھوبھنیشور میں کھیلا جائے گا جس میں 16 ٹیمیں شرکت کریں گی۔ واضح رہے کہ تاحال پاکستان ہاکی ٹیم کو بھارت کی جانب سے ویزے بھی جاری نہیں کیے گئے۔

pakistan hockey federation

hockey world cup

Tabool ads will show in this div