سوات: شوہر نے عدالت میں چاقو کے وار کرکے بیوی کو قتل کردیا

ملزم عارف نے عدالت میں پیشی کے موقع پر چاقو کے وار کرکے بیوی کو قتل کردیا

ضلع سوات کے مرکزی شہر منگورہ میں قائم ڈسٹرکٹ اینڈ فیملی کورٹس کے اندر شوہر نے چاقو کے وار کرکے بیوی کو قتل کردیا۔ پولیس نے ملزم کو گرفتار کرکے مقدمہ درج کرلیا ہے جبکہ عدالتی احاطے میں قتل کے بعد ڈسٹرکٹ بار نے احتجاج کرتے ہوئے عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کردیا۔

سوات سے سماء ٹی وی کے نمائندہ شہاب الدین کے مطابق منگورہ کے نواحی علاقہ کوکاری کی رہائشی 34 سالہ خاتون عظمیٰ نے اپنے شوہر سے خلع ( طلاق) لینے کے لیے عدالت میں درخواست دائر کر رکھی تھی۔

بدھ کی صبح درخواست کی سماعت کے موقع پر دونوں میاں بیوی عدالت میں پیش ہوئے جہاں شوہر عارف نے کمرہ عدالت سے باہر چاقو کے پے درپے وار کرکے عظمیٰ کو قتل کردیا۔

عدالت میں موجود پولیس اہلکاروں نے ملزم عارف کو گرفتار کرکے سیدو شریف تھانے منتقل کردیا جہاں اس کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔

مقتولہ عظمیٰ کی لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے سیدو شریف اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: سوات میں 11سال بعد فوج  نے انتظامی امور سول انتظامیہ کے حوالے کر دیے

سوات آپریشن کے بعد ضلعی عدالتوں کی سیکیورٹی سخت کردی گئی ہے۔ کئی برس عدالت کے باہر آرمی کے چیک پوسٹ قائم تھے جہاں سخت سیکیورٹی مراحل سے گزر کر عدالت میں داخل ہوا جاسکتا تھا۔

حال ہی میں پاک فوج نے تمام تر انتظامی امور سول انتظامیہ کے حوالے کردیے ہیں جس کے تحت ضلع عدالتوں کے باہر بھی آرمی کے چیک پوسٹ ختم کردئے گئے ہیں جبکہ پولیس کی بھاری نفری تعینات کردی گئی ہے۔

سخت سیکیورٹی انتظامات کے باجود ملزم چاقو لے کر عدالت کے احاطے میں داخل ہوگیا جس پر ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن نے احتجاج کرتے ہوئے عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کردیا جس کے باعث مقدمات کی سماعت نہ ہوسکی اور سائلین کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

دوسری جانب سوات جیسے ’قدامت پسند‘ علاقہ میں خلع کے کیسز میں اضافہ ہوا ہے۔ خواتین کے حقوق پر کام کرنے والے سماجی کارکنان کا کہنا ہے کہ سوات آپریشن کے دوران جب لوگ یہاں سے نقل مکانی کرکے دوسرے شہری علاقوں میں گئے جہاں خواتین میں یہ شعور اجاگر ہوا کہ ان کو شوہر سے خلع لینے کا حق حاصل ہے۔

WIFE

HUSBAND

Tabool ads will show in this div