پارلیمنٹ کے اجلاس کے دوران وزرا کے ملکی اور غیرملکی دوروں پر پابندی

حکومت نے پارلیمنٹ کے اجلاس کے دوران وزرا کے ملکی اور غیر ملکی دوروں پر پابندی عائد کردی۔

وزیراعظم کی جانب سے جاری ہدایات میں پارلیمنٹ کے اجلاس کے دوران وزرا کے دوروں پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ دوران اجلاس وزراء کے اسلام آباد میں ہی رہنے اور حاضری یقینی بنانے کی ہدایت بھی کی گئی ہے۔

اجلاس کے دوران کسی وزیر کا ملکی یا غير ملکی دورہ نہیں ہوگا۔اس پابندی کا اطلاق کل بروز پیر سے ہونے والے قومی اسمبلی اجلاس سے ہوگا۔

اس کے علاوہ کابینہ ڈویژن نے وفاقی وزرا اور اعلیٰ عہدوں پر فائز سرکاری افسران کے بیرون ملک دوروں سے  متعلق نئی گائیڈ لائنز کا نوٹیفکیشن جاری کردیا ہے۔غیرملکی دوروں پر جانے والے سرکاری وفود تین ارکان پرمشتمل ہوں گے۔فرسٹ کلاس میں صدر مملکت اور چیف جسٹس کے سوا کوئی سفر نہیں کرسکے گا۔

صدر و چیف جسٹس فرسٹ کلاس، وزیراعظم بزنس کلاس میں سفر کر سکیں گے

وزرا اور مشیر ایک سال میں صرف تین بار بیرون ملک جاسکیں گے تاہم خارجہ اور تجارت کے وزرا اس شرط  سے مستثنیٰ قرار دئیے گئےہیں۔نئی حکم نامے کے تحت فرسٹ کلاس پر ہوائی سفر کا حق صرف صدرِ مملکت اور چیف جسٹس کا ہے۔

 وزیراعظم، چیئرمین سینیٹ اور سروسز چیفس بزنس کلاس میں سفر کریں گے۔ 20گریڈ سے نیچے تمام افسران کو اکانومی میں سفرکرنا ہوگا۔ تمام وفود دورہ مکمل کرنے کے 15 دن بعد تک رپورٹ وزارت خارجہ اور متعلقہ ڈویژن میں جمع کرانے کے بھی پابند ہوں گے۔

FEDERAL CABINET

Tabool ads will show in this div