صحافی جمال خاشقجی کے قتل کا مقدمہ سعودی عرب میں چلے گا

سعودی وزير خارجہ عادل جبير نے  صحافی جمال خاشقجي قتل کے ملزمان کا مقدمہ سعودي عرب میں ہی چلانے کا اعلان کیا ہے۔


ترک حکومت چاہتی تھی کہ جمال خاشقجي قتل کا مقدمہ ترکي ميں ہی چلايا جائے اور اٹھارہ ملزمان کو اُن کے حوالے کيا جائے۔ سعودی صحافی کو استنبول میں واقع سعودی قونصل خانے میں قتل کردیا گیا تھا۔

بحرين ميں ايک کانفرنس سے خطاب ميں عادل جبير نے واضح کیا کہ جمال خاشقجي کے قتل کا مقدمہ سعودی عرب میں چلایا جائے گا۔ اس موقع پر عادل جبير نے جمال خاشقجي سے متعلق مغربي ميڈيا کي خبريں ہيجان خيز قرار ديں۔

دوسري جانب جمال خاشقجي کي منگيتر ہاتف چنگيز نے وائٹ ہاؤس کي دعوت قبول کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صدر ٹرمپ قتل کي تحقيقات ميں سنجيدہ نہيں۔

ہاتف چنگيز نے ترک ٹي وي کو انٹرويوميں کہا کہ صدر ٹرمپ کي دعوت کا مقصد امريکا کي رائے عامہ پر اثر انداز ہونا ہے، خاتون نے بتايا کہ خاشقجي نے مدينے ميں تدفين کي وصيت کي تھي۔

jamal khashoggi murder

Tabool ads will show in this div