گونگے اور بہرے،ماہی گیروں  کا روزگار،گورنر ہاؤس بلوچستان

بلوچستان حکومت گونگے اور بہرے چلا رہے ہیں، سردار اختر جان مینگل

روزنامہ آزادی

بلوچستان نیشنل پارٹی کے سربراہ سردار اختر جان مینگل نے کہا ہے کہ بلوچستان میں صورتحال آج بھی گھمبیر ہے مشرف کے حق میں ووٹ ڈالنے والے بلوچستان کے لاپتہ افراد کو مارنے میں شریک ہیں،ہمیں وزارتوں کی پیشکش ہوئی تاہم ہم نے بلوچستان کے حقوق کی خاطر ٹھکرا دیا۔وہ وڈھ میں اجتماع عام سے خطاب کر رہے تھے،ان کا کہنا تھا کہ بی این پی اور جمعیت نے مشترکہ فیصلہ کیا اگر حکومت میں جائیں گے تو دونوں جائیں گے مگر بی این پی اور جمعیت نے اپوزیشن کو ترجیح دی بلوچستان کے حقوق اور ساحل ووسائل پر کوئی سودا بازی نہیں کریں گے، بلوچستان حکومت گونگے اور بہرے چلا رہے ہیں ،لاپتہ افراد کی چیخیں اب بھی میرے کانوں میں گونجتی ہیں۔

ماہی گیروں  کا روزگار چھینا جا رہا ہے، میر حمل کلمتی

روزنامہ انتخاب

گوادر سے منتخب رکن صوبائی اسمبلی میر حمل کلمتی کا کہنا تھا کہ ماہی گیروں کے تحفظات دور کرنے کی ہمیشہ یقین دہانیاں کی گئی ہیں، لیکن تحفظات دور ہونے کے بجائے بڑھتے جا رہے ہیں ،اب تو حالت یہ ہے کہ ماہی گیروں  کا روزگار تک چھینا جا رہا ہے،ہم نے ہر فورم پہ اعلی حکام کے سامنے ماہی گیروں کے تحفظات رکھے ہیں ، ہم ایکسپریس وے کے خلاف نہیں لیکن ماہی گیروں کے تحفظات دور کیے بغیر ایسے اقدامات سے مقامی لوگوں میں بے چینی جنم لے رہی ہے ،ہم ماہی گیروں کے روزگار چھیننے کی پرزور مذمت کرتے ہیں ، اور اسمبلی کے اگلے اجلاس میں اس متعلق بھرپور آواز اٹھائیں گے،ان کا کہنا تھا کہ  میں صوبائی حکومت سے درخواست کرتا ہوں کہ گوادر سے متعلق اسمبلی میں ایک اسپیشل سیشن رکھیں جس سے ہم گوادر کے مقامی لوگوں کے زمینوں ، ماہی گیروں کے روزگار اور انکے مستقبل پر بحث کیا جائے۔

گورنر ہاؤس بلوچستان کو بھی عوام کیلئے کھول دیا گیا

روزنامہ باخبر

گورنر ہاؤس بلوچستان کو بھی عوام کیلئے کھول دیا گیا ،سردار بہادر خان ویمن یونیورسٹی کی طالبات نے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر رخسانہ جبین کی سربراہی میں تاریخی گورنر ہاؤس کا دورہ کیا۔  گورنر بلوچستان جسٹس ریٹائرڈ امان اللہ یاسین زئی نے طالبات کو گورنر ہاؤس پہنچنے پر خوش آمدید کیا۔ طالبات نے گورنر ہاؤس کی عمارت کے مختلف حصہ دیکھے اور گورنر ہاؤس میں لگی قدیم تصاویر اور مجسموں میں گہری دلچسپی کا اظہار کیا۔  طالبات نے پہلی مرتبہ گورنر ہاؤس آمد پر بے حد خوشی کا اظہار کیا اور تاریخی گورنر ہاؤس سے متعلق گورنر بلوچستان سے سوالات کئے ۔ گورنر بلوچستان نے فردا فردا تمام طالبات کے سوالات سنے اور تفصیل سے طالبات کو جواب دیے ۔ گورنر نے بتایا کہ بلوچستان گورنر ہاؤس کی عمارت کو1888 میں تعمیر کیا گیا ۔ 1935 کے زلزلے میں عمارت کو کافی نقصان پہنچنے پر عمارت کو دوبارہ از سر نو تعمیر کیا گیا ۔ طالبات نے گورنر ہاؤس میں قائم سبزہ زار میں برٹش بلوچستان کے دور کے انگریز وائس رائے کے مجسمہ بھی دیکھے اور تصاویربھی لیں۔

 

governor house

Sardar Akhtar Mengal

BNP Mengal

Tabool ads will show in this div