قصور کی زینب کے قاتل عمران کو 17 اکتوبر کو پھانسی دی جائے گی

Oct 13, 2018
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/10/Kasur-Death-Sentence-Lhr-Pkg-12-10.mp4"][/video]

قصور کی ننھی زینب کے قاتل عمران کو 17 اکتوبر کو پھانسی دی جائے گی۔

قصور میں زینب کو رواں برس زیادتی کے بعد قتل کردیا گیاتھا۔ اس کو قتل کرنے والا درندہ اگلے ہفتے اپنے انجام کو پہنچ جائے گا۔ عمران کو17 اکتوبر کو پھانسی دے دی جائے گی ۔ قصور میں زینب کے علاوہ عمران نے 6 کمسن بچیوں کو درندگی کا نشانہ بنایا تھا۔  تمام کیسز میں مجرم کو مجموعی طور پر اکیس بار سزائے موت سنائی گئی ہے۔

انسداد دہشتگردی عدالت نے مجرم کے بلیک وارنٹ جاری کردیے ہیں۔ مجرم کی رحم کی اپیل لاہور ہائی کورٹ،سپریم کورٹ اور صدرِ پاکستان مسترد کر چکے ہیں۔زینب قتل کیس میں مجرم عمران کو 17 فروری کو سزائے موت سنائی گئی تھی۔

 اس سے قبل زينب قتل کيس کو ملکي تاريخ کا تيزترين ٹرائل قرارديا گیا  ۔ رواں برس  9 جنوري کو ننھي زینب کي لاش  کچرا کنڈي سے ملي تھي  جس کے بعد قصورميں ہنگامے پھوٹ پڑے ۔23 جنوري کو مجرم کي گرفتاري کے بعد کوٹ لکھپت جيل ميں مقدمے کي سماعت ہوئي ۔

پنجاب حکومت نے تحقيقات کيلئے جے آئي ٹي بنائي جبکہ چيف جسٹس نے 21 جنوري کو واقعے پر ازخود نوٹس ليتے ہوئے اداروں کو 72 گھنٹے کي مہلت دی۔  23جنوري کو پوليس نے ملزم عمران کی گرفتاری کا دعویٰ  کيا۔ ملزم پر12فروري کو فردِ جرم عائد کی گئی۔

زینب قتل کیس کو ملکی تاریخ کا تیز ترین ٹرائل کہا جاسکتاہے

زینب قتل کیس ميں 56 گواہان کے بيانات ريکارڈہوئے جبکہ 36 افراد کی شہادتیں پیش کی گئیں ۔ ڈي اين اے اورپولی گرافک ٹيسٹ اور4ويڈيوز کو بھي بطورثبوت پيش کياگيا۔ 18 فروری کو مجرم کو چار بار سزائے موت کاحکم سناياگيا۔

zainab murder case

Tabool ads will show in this div