نواز شریف نے ای سی ایل سے نام نکالنے کیلئے درخواست دیدی

سابق وزیراعظم نواز شریف نے وزارت داخلہ سے اپنا، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کا نام ایگزیکٹ کنٹرول لسٹ سے نکالنے کی درخواست کردی۔

سابق وزیراعظم نواز شریف نے وزارت داخلہ کو لکھے گئے خط میں کہا ہے کہ ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) صفدر نے 4 اکتوبر کو وزارت داخلہ کو درخواست کی تھی، درخواست پر جواب نہ آنے کے بعد دوبارہ رابطہ کیا ہے۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ بیرون ملک سفر کرنا چاہتے ہیں، ای سی ایل سے نام نکالا جائے، ای سی ایل میں نام ڈال کر آئین کی خلاف ورزی کی گئی، نواز شریف کی جانب سے موقف اپنایا گیا ہے کہ یہ اقدام آرٹیکل 4 ، 15 اور 25 کے خلاف ہے، کسی عدالت نے نام ای سی ایل پر ڈالنے کا حکم نہیں دیا ۔

خط کے متن میں مزید کہا گیا ہے کہ احتساب عدالت نے تینوں ملزمان کو کرپشن کے الزام سے بری کیا، نیب کرپشن کے الزامات ثابت کرنے میں ناکام رہا، ہم قانون پر عمل در آمد کرنے والے شہری ہیں، ہم نے رضاکارانہ گرفتاری دی، تینوں نے عدالت کے سامنے پیش ہونے کے بانڈز جمع کروا رکھے ہیں، تینوں کے افراد ای سی ایل سے نکالے جائیں۔

یاد رہے وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے وفاقی کابینہ کے پہلے اجلاس میں نواز شریف اور ان کی بیٹی کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

وفاقی وزیراطلاعات نے میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے کہا تھا کہ اسحاق ڈار،حسن اور حسین نواز ملک سے فرار اور اشتہاری ہیں، تینوں فرار افراد کو واپس لانے کے لئے اقدامات کیے جائیں گے، وزارت داخلہ کو حکم دیا گیا ہے کہ تینوں مفرور افراد کو واپس لایا جائے، جس کے بعد 21 اگست کو سابق وزیراعظم نوازشریف اور مریم نواز کا نام ایگزیکٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈالا گیا تھا۔

اس سے قبل نیب کی جانب سے نگران حکومت کو بھی شریف خاندان کے نام ای سی ایل میں ڈالنے کے لئے خط لکھا گیا تھا، جس کے بعد نگران حکومت نے حسن ،حسین نواز اور اسحاق ڈار کے نام بلیک لسٹ میں شامل کئے گئے تھے۔

واضح رہے کہ احتساب عدالت اسلام آباد نے رواں سال 6 جولائی کو ایون فیلڈ ریفرنس میں نواز شریف کو 11، مریم نواز کو 8 اور کیپٹن صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی تھی۔ نوازشریف اور ان کی بیٹی مریم نواز 13 جولائی کو جب لندن سے وطن واپس پہنچے تو دونوں کو لاہور ایئرپورٹ پر طیارے سے ہی گرفتار کرلیا گیا تھا۔

بعد ازاں 19 ستمبر کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے ایوان فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نوازشریف، مریم نواز، کپیٹن(ر)صفدر کی سزائیں معطل کرتے ہوئے رہا کرنے کا حکم دیا۔

IMRAN KHAN

ECL

INTERIOR MINISTRY

Avenfield Reference Case

Tabool ads will show in this div