کالمز / بلاگ

بچوں کو سیاسی لڑائیوں میں نہیں گھسیٹا جانا چاہئے، مبشرلقمان

سماء کے اینکر پرسن مبشر لقمان نے کہا کہ کشمالہ طارق کے بیٹے کی ویڈیو وائرل ہونے کے بعد سوشل میڈیا پر کشمالہ کے خلاف بدنیتی پر مبنی مہم چلائی جارہی ہے ۔

یہ تنازعہ 12 اپریل کو شروع ہوا جب کشمالہ طارق کے بیٹے سمیت 12 طلبہ کے درمیان او لیول کے امتحانات کے دوران معمولی بات پر ہونے والے جھگڑا کی ویڈیو منظر عام پر آئی ، جس پر اسکول انتظامیہ نے فیصلہ کیا کہ تمام 12 طلبہ کو نظم و ضوابط کی خلاف ورزی پر اے-لیول میں داخلہ کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

مبشر لقمان نے سوال اٹھایا کہ ایچی سن اسکول کی ویڈیو باہر کیسے آئی ویڈیو اسکول کی ملکیت ہے؟ ۔ انہوں نے کہا کہ بچوں کو سیاسی لڑائیوں میں نہیں گھسیٹا جانا چاہئے۔

مبشر لقمان نے کہا آج کشمالہ طارق سے ملاقات ہوئی تو کشمالہ کا کہنا تھا کہ کالج انتظامیہ اور بورڈ آف گورنرز اس معاملے کی تحقیقات کریں ۔

گزشتہ دنوں ایسی اطلاعات موجود تھیں کہ کشمالہ طارق پنجاب کے گورنر چوہدری سرور کو اثر انداز کرنے کی کوشش کی گئی تھی تاکہ وہ ایچی سن پرنسپل کے خلاف کارروائی کریں۔

تاہم کشمالہ طارق نے اس کی تردید کردی ، انہوں مبشر لقمان سے کہا کہ میں نے ایک والدہ کے طور پر شکایت درج کی ہے جس کے بیٹے کو بغیر کسی انکوائری کے سزا دی گئی ہے۔

مبشر لقمان کا کہنا تھا کہ کشمالہ نے گورنر پنجاب کے حلف اٹھانے کے بعد ان سے شکایت کی ۔

 

MUBASHIR LUQMAN

KASHMALA TARIQ

Tabool ads will show in this div