نواز شریف سزا کیس: ہائیکورٹ نے نیب سے جواب طلب کرلیا

Sep 10, 2018

اسلام آباد ہائیکورٹ نے سزا کے خلاف سابق وزیراعظم نواز شریف، مریم اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کی اپیلوں پر نیب سے تحریری جواب طلب کر لیا۔ سزا معطلی کی درخواستوں پر وکیل صفائی کل سے دلائل دیں گے۔ احتساب عدالت میں بھی نیب ریفرنسز کی سماعت کے دوران واجد ضیاء پر خواجہ حارث کی جرح مکمل نہ ہوسکی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ میں دو رکنی بینچ نے ایون فیلڈ ریفرنس کے مجرموں کی اپیلوں کی سماعت کی۔ نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے دیگر ریفرنسز میں پیشرفت سے متعلق عدالت کو آگاہ کیا۔

خواجہ حارث نے سزا معطلی کی درخواستیں پہلے سننے کی استدعا کی تو نیب پراسیکیوٹر اکرم قریشی نے اعتراض اٹھایا۔ عدالت نے نیب کا اعتراض مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اس اسٹیج پر ہم کیس کو شواہد اور میرٹ پر نہیں دیکھ سکتے۔

ہائیکورٹ نے نواز شریف کے وکیل کو کل سے دو دن میں دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کردی اور نیب کو تحریری جواب جمع کرانے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔ سماعت کے دوران اپوزیشن لیڈر شہباز شریف بھی بار روم میں موجود رہے۔

دوسری طرف احتساب عدالت میں العزیزیہ ریفرنس کی بھی سماعت ہوئی۔ سابق وزیراعظم کو اڈیالہ جیل سے سخت سکیورٹی میں لایا گیا۔

جے آئی ٹی سربراہ واجد ضیا پر جرح کے دوران معمول کے مطابق وکیل صفائی اور نیب پراسیکورٹر کے درمیان گرما گرمی بھی ہوئی۔

سماعت کے دوران جج ارشد ملک نے چیونگم چبانے پر مشاہد حسین کو ڈانٹ پلا کر کمرہ عدالت سے باہر نکال دیا۔

عدالت نے ریفرنس کی سماعت منگل تک ملتوی کردی ۔

ISLAMABAD HIGH COURT