عاطف میاں کو اقتصادی مشاورتی کونسل سے الگ کردیا گیا

امریکی نژاد پاکستانی ماہر اقتصادیات عاطف میاں نے اقتصادی مشاورتی کونسل سے استعفیٰ دے دیا۔ حکومت کی جانب سے عاطف میاں کو استعفیٰ جمع کرانے کی ہدایت کردی گئی ہیں۔ واضح رہے کہ عاطف میاں کے عقیدے سے متعلق مختلف قیاس آرائیاں کی گئی تھیں۔

تحریک انصاف کے سینیٹر فیصل جاوید کی جانب سے بھی عاطف میاں کو کمیٹی سے ہٹانے کی تصدیق کردی گئی ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور سینیٹر فیصل جاوید خان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ عاطف میاں سے کہا گیا ہے کہ وہ اقتصادی مشاورتی کونسل سے الگ ہوجائیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ عاطف میاں اقتصادی مشاورتی کونسل سے الگ ہونے پر متفق ہوگئے ہیں، عاطف میاں کے متبادل کا اعلان جلد کر دیا جائے گا، جب کہ نئے رکن کی تعیناتی کا فیصلہ بھی جلد کیا جائے گا۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ تحریک لبیک پاکستان سمیت مختلف سیاسی اور مذہبی جماعتوں کی جانب سے عاطف میاں کی تقرری پر شدید تنقید اور تحفظات کا اظہار کیا گیا تھا۔

پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما کی جانب سے عاطف میاں کی تقرری پر خیبرپختونخوا اسمبلی میں مذمتی قرارداد بھی جمع کرائی گئی تھی، جب کہ حافظ احتشام احمد، جو لال مسجد شہداء فاونڈیشن کے رکن ہیں، ان کی جانب سے اسلام آباد ہائی کورٹ میں تقرری کو چیلنج کیا گیا تھا۔

قبل ازیں منگل کے روز حکومت کی جانب سے عاطف میاں کی تقرری کا بھرپور انداز میں دفاع کیا گیا۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد حسین چوہدری کا کہنا تھا کہ عاطف میاں وہ شخصیت ہیں، جنہیں اگلا نوبل برائے امن کیلئے منتخب کیا جائے گا اور ایسے شخص کا تقرر فخر کی بات ہے، ہم انہیں کیوں مقرر نہ کریں؟، کسی کو بھی کسی اقلیتی رکن کی تقرری پر کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہیئے، اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ حکومتی ذمہ داری ہے۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی جانب سے اٹھارہ رکنی کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا تھا، جس کا مقصد اقتصادی اور معاشی معاملات اور مسائل پر غور اور حل ہے۔

PTI

Economic Advisory Council

Atif Mian

Tabool ads will show in this div