شوکت یوسفزئی پختونخوا حکومت کے ترجمان کے عہدے سے مستعفی

خیبر پختونخوا حکومت کے ترجمان شوکت یوسفزئی نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

اپنے استعفیٰ میں شوکت یوسفزئی نے کہا ہے کہ حکومتی عہدے کے ساتھ ضمنی انتخاب میں حصہ نہیں لے سکتا۔ اس لیے عہدہ چھوڑ رہا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کے بعد پارٹی قیادت نے جو ذمہ داری بھی سونپی اسے قبول کرلوں گا۔

واضح رہے کہ 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں شوکت یوسفزئی صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی کے 23 شانگلہ سے کامیاب ہوئے تھے تاہم خواتین کا ٹرن آؤٹ 10 فیصد سے کم ہونے کے باعث مذکورہ حلقے سے ہارنے والے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے امیدوار نے الیکشن کمیشن کو انتخابی نتائج کالعدم قرار دینے کی درخواست دی۔

درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ حلقے میں 2 پولنگ اسٹیشنز پر خواتین کے ووٹ بالکل کاسٹ نہیں ہوئے اور ایک جرگے میں باقاعدہ اعلان کر کے خواتین کو ووٹ کاسٹ کرنے سے روکا گیا۔ خواتین نے اس جرگہ کے فیصلہ کے خلاف درخواستیں دیں اور ریٹرننگ آفیسر کو بھی آگاہ کیا۔

درخواست میں یہ بھی کہا گیا کہ مذکورہ حلقے سے خواتین ووٹرز کا ٹرن آؤٹ 5.1 فیصد رہا جبکہ الیکشن کمیشن کے قوانین کے مطابق خواتین کا ٹرن آؤٹ 10 فیصد ہونا لازمی تھا۔ حلقے میں مجموعی ووٹ 69827 تھے جن میں سے 3505 خواتین نے ووٹ ڈالے تھے۔

جس پر الیکشن کمیشن نے مذکورہ حلقے میں انتخابی نتائج کالعدم قرار دے کر دوبارہ الیکشن کروانے کے احکامات جاری کردئے۔

بعد ازاں تحریک انصاف نے خیبر پختونخوا میں اقتدار سنبھالا تو شوکت یوسفزئی کو ترجمان مقرر کردیا۔

شوکت یوسفزئی کے حلقہ میں 14 اکتوبر کو ضمنی انتخاب ہوگا جس میں وہ تحریک انصاف کے امیدوار ہیں۔

PTI

Khyber Pakhtunkhawa

Shaukat Yousafzai

Tabool ads will show in this div