حنیف عباسی انتخابات کیلئے اہل یا نااہل؟فیصلہ آج ہوگا

Jul 21, 2018

مسلم لیگ (ن) کے رہنما حنیف عباسی کے خلاف ایفیڈرین کوٹہ کیس میں فیصلہ ہفتہ کے روز سنایا جائے گا۔ ماتحت عدالت میں دلائل کے لیے مزید وقت دینے کی درخواست سپریم کورٹ میں مسترد کردی گئی ہے۔

انسداد منشیات کی خصوصی عدالت کے جج نے درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ انہیں 21 جولائی کو ہی کیس کا فیصلہ دینا ہے ،مزید وقت نہیں دیا جاسکتا، حنیف عباسی کے وکیل نے کہا کہ ابھی دلائل مکمل نہیں ہو سکتے،جس حد تک دلائل دے سکے ، دیں گے۔

ایفی ڈرین کوٹہ کیس، حنیف عباسی کی اپیل خارج

راول پنڈی کی انسداد منشیات کی خصوصی عدالت کے جج محمد اکرم خان نے درخواست مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ہائی کورٹ سے کیس کی سماعت اور فیصلے کے لیے دس دن مانگے تھے مگر ہائی کورٹ نے درخواست مسترد کر دی ،خصوصی عدالت کے جج نے کہا کہ وہ ماتحت ہونے کے ناطے عدالت کے فیصلے پر عمل درآمد کرنے کے پابند ہیں۔

انہوں نے حنیف عباسی کے وکیل سے کہا کہ دلائل سنیں گے، چاہیے اگلا دن بھی آجائے اور دلائل سننے کے بعد چیمبر میں بیٹھ کر فیصلہ لکھیں گے۔

اس موقع پر اینٹی نارکوٹکس فورس (اے این ایف) کے وکیل نے گواہ نعیم کا بیان عدالت میں پڑھ کر سنایا اور کہا کہ گواہ نے بیان دیا ہے، اس کا سرٹیفیکٹ دینا چاہتے ہیں، جس پر حنیف عباسی کے وکیل نے کہا کہ گواہ کے بیان کی کلیریکل غلطیوں کو اس موقع پر درست نہیں کیا جا سکتا، گواہ نے 2015 میں بیان ریکارڈ کروایا اور نیب دلائل مکمل کر چکی ہے۔

 

واضح رہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کی جانب سے پہلے ہی انسداد منشیات کی عدالت کو حنیف عباسی کے خلاف ایفیڈرین کیس کا فیصلہ 21 جولائی کو سنانے کا حکم دے رکھا ہے۔ ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف حنیف عباسی نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا تاہم اعلیٰ عدالت نے 17 جولائی کو فیصلہ سناتے ہوئے ایفی ڈرین کیس کا فیصلہ 21 جولائی کو سنانے کے حکم کو برقرار رکھا۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ مسلم لیگ ن کے رہنما حنیف عباسی قومی اسمبلی کے حلقے 60 سے عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کے مد مقابل انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں۔ راولپنڈی کے اس حلقے سے شیخ رشید کو تحریک انصاف کی حمایت حاصل ہے۔

ISLAMABAD HIGH COURT

Disqualify

efidrine case

Election2018