نواز شریف اور مریم نواز قید تنہائی میں

ARTWORK: Sheikh Faisal

سابق وزیراعظم نواز شریف اڈیالہ جیل میں 10 سال قید کی سزا کاٹ رہے ہیں، ان سے ملاقات کیلئے پاکستان بار کونسل کا وفد پہنچا، مسلم لیگ ن کے قائد نے وفد کے سامنے شکایات کے انبار لگادیئے، کہتے ہیں سڑا ہوا کھانا دیا جاتا ہے، اے سی اور ٹی وی کی سہولت بھی نہیں۔

سابق وزیراعظم نواز شریف جیل کی زندگی سے چند دن میں ہی گھبرا گئے، پاکستان بار کونسل کا وفد ملاقات کیلئے پہنچا تو شکایتوں کے انبار لگادیئے، ملاقات میں مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر بھی موجود تھے۔

وائس چئيرمين پاکستان بار کونسل کامران مرتضیٰ نے سماء سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ سابق وزیراعظم نے شکوہ کیا کہ ٹی وی اور اے سی کی سہولت دستیاب نہیں، پہلی رات سونے کیلئے پتلا گدا ديا گيا، گھر سے راشن آتا ہے تو بتايا نہيں جاتا، اکثر چيزيں خراب ہونے کے بعد دی جاتی ہيں۔

کامران مرتضیٰ کہتے ہیں کہ نواز شریف جب ملنے آئے تو پسینے میں شرابور تھے، انہوں نے بتایا کہ واش روم سے بدبو آتی ہے، کھانا سڑ جاتا ہے تب دیا جاتا ہے۔

وائس چیئرمین پی بی سی کا کہنا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شريف نے جیل میں خدمت گار کا نہيں بتايا، مريم اور نواز شريف قيد تنہائی ميں ہيں، باپ بيٹی کے کمرے میں آدھا کلو میٹر فاصلہ ہے۔

سابق وزیراعظم نواز شریف کو ایون فیلڈ ریفرنس کیس میں احتساب عدالت نے 10 سال قید بامشقت اور 80 لاکھ پاؤنڈ جرمانہ، مریم نواز کو 7 سال قید اور 20 لاکھ پاؤنڈ جرمانہ جبکہ کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی ہے۔

ADIYALA

MARYAM NAWAZ

Panama

Tabool ads will show in this div