'وزن کم کرو ورنہ نوکری سے نکال دیں گے'

سیکیورٹی فورسز میں بھرتی کے وقت امیدوار کی فٹنس، جسمانی اور دماغی صحت کی مکمل جانچ پڑتال کی جاتی ہے لیکن منتخب ہونے کے بعد بعض اہلکار غفلت یا دوسرے عوامل کی بنیاد پر جسمانی صحت اور فٹنس برقرار نہیں رکھ سکتے۔ ایسی ہی صورتحال کا بھارتی ریاست کرناٹک کی ریزرو پولیس فورس کو سامنا ہے جس کے اہلکاروں کی بڑھتے وزن نے فورس کے اعلیٰ حکام کو تشویش میں مبتلا کردیا ہے۔

ریاستی پولیس کے سربراہ بھسکر راو نے صورتحال پر قابو پانے کے لیے ایک حکمنامہ جاری کیا ہے جس میں اہلکاروں کی خبردار کیا ہے کہ وزن کم کرو ورنہ نوکری سے ہاتھ دھونے پڑیں گے۔

پولیس چیف کے مطابق یہ سخت فیصلہ اس لیے کیا گیا ہے کہ فورس میں ’موٹے‘ اہلکاروں کی تعداد بڑھ گئی ہے۔ گزشتہ 18 ماہ کے دوران اپنی ’طرز زندگی‘ کے باعث لگنے والی بیماریوں کی وجہ سے 100 سے زائد اہلکار مرگئے ہیں۔ اس لئے اب ریزرو پولیس کے اعلیٰ حکام کو ہدایت جاری کی گئی ہے کہ اپنے ماتحت اہلکاروں کے روزانہ ورزش پر توجہ مرکوز کی جائے تاکہ ان کا وزن کم ہوجائے۔

بھسکر راو نے کہا کہ ہم نے 6 ماہ سے اہلکاروں کے شوگر لیول اور جسمانی صحت کی نگرانی کر رہے ہیں۔ بعض اہلکار سستی اور کاہلی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ حالیہ حکمنامہ ان کے لیے تنبیہ کے طور پر جاری کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ گزشہ 18 ماہ کے دوران کرناٹک ریزرو پولیس کے 153 اہلکار مر گئے ہیں جس میں 24 اہلکار روڈ حادثات جبکہ باقی سارے اپبے طرز زندگی کے باعث امراض قلب اور ذیابیطس جیسی مہلک بیماریوں کا شکار ہوگئے اور انہیں بیماریوں نے ان کی جان لے لی۔ یہ کسی بھی فورس کے لیے ایک سنگین نوعیت کا مسئلہ ہے۔

بھسکر راو نے بتایا کہ ریزرو پولیس کے اہلکار چاول سے بنی اشیا، تلی ہوئی چیزیں کھاتے ہیں۔ تمباکونوشی اور شراب نوشی بھی کرتے ہیں تاہم ورزش نہیں کرتے۔ اب ہر پلاٹون کے کمانڈر کو ہدایات دی ہیں کہ اپنے اہلکاروں کے وزن کی نگرانی کریں۔ اس مقصد کے لیے محکمہ ریزرو پولیس نے اہلکاروں کے لیے تیراکی اور یوگا سمیت دیگر کھیلوں کی سرگرمیاں منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

پولیس سربراہ نے مزید کہا کہ ہر اہلکار کو ڈاکٹر کی ہدایت کے مطابق ورزش کرایا جائے گا۔

HEALTH

Tabool ads will show in this div