خلائی مخلوق سیاسی نعرہ،وزیراعظم وہ جسے عوام منتخب کریں:پاک فوج

Jul 10, 2018

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/07/DG-ISPR-Asif-Ghafoor-Pc-10-07.mp4"][/video]

ڈی جی آئی ایس پی آرمیجر جنرل آصف غفور کا کہنا ہے کہ فوج کا کام الیکشن کروانا نہیں بلکہ الیکشن کےکام میں معاونت کرنا ہے۔ الیکشن سے تین دن پہلے فوج کو تعینات کردیا جائے گا۔اس بات کا علم 25 جولائی کو ہی ہوگا کہ کون سی جماعت جیتے گی۔انتخابات دو ہزار اٹھارہ ميں فوج کا کوئی کردار نہيں نہ ہماری کوئی سياسی جماعت یا سياسی مفاد ہے۔ ہماري ترجيح صرف پاکستان ہے ۔انتخابی نشان جیپ سے متعلق بھی وضاحت کردی۔

جی ایچ کیو راولپنڈی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے سربراہ نے واضح کیا کہ عام انتخابات میں فوج صرف معاونت کر رہی ہے۔ الیکشن کروانا ریاست کی ذمہ داری ہے۔میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ اللہ کا شکر ہے ملک ایک بار پھر انتخابات کی جانب جا رہا ہے جس میں فوج کا کردار مینڈیٹ کے مطابق صرف معاونت کرنے کا ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ فوج کا کام جلسے جلوسوں اور پولنگ کے دن پرامن ماحول قائم رکھنا ہے تا کہ انتخابی عمل بے ضابطگی اورتعصب سے بالاتر ہو۔ سياسي جماعتوں کي انتخابي مہم بلا خوف ہوني چاہيئےاور بيلٹ باکس ميں جتنے ووٹ ڈليں اتنے ہي نکلنے چاہئيں۔ پولنگ میں کسی بھی بے ضابطگي کي نشاندہي اليکشن کميشن کے ذريعے ہي کي جائے گی۔اليکشن کے حوالے سے شکوک و شبہات پيدا ہوتے رہے لیکن اب دم توڑ گئے ہیں۔ 25 جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں عوام ووٹ کا حق اورپر امن ماحول کيلئے فوج اپنا کردار ادا کرے گی۔ 25 جولائی کوئی آخري تاريخ نہيں ہے 26 بھي آئے گی اور کون سی جماعت جيتے گي وہ 25 جولائي کو پتہ چلے گا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے اپنی پریس کانفرنس میں مزید کہا کہ پونے چار لاکھ فوجيوں کو باقاعدہ ڈيوٹيز کی تربيت دي جارہي ہے۔ پاک فوج غير سياسي،غيرجانبدار ہوکر اليکشن کميشن کي مدد کرے گی۔اليکشن ميں کسي قسم کي مداخلت نہيں ہوگي۔ پولنگ سےتين دن پہلے فوج کو ڈيوٹيز پر تعينات کرديا جائے گا۔ حساس پولنگ اسٹيشنز پر دو جوان اندر اور دو باہر تعینات کیے جائیں گے جبکہ نارمل پولنگ اسٹيشنز پر تعداد ميں کمي بيشي ہوسکتي ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ تفصیلات بتائی گئی ہیں کہ کون کون پولنگ اسٹيشن کے اندر آسکتا ہے۔ اندر تعینات فوجی جوان غير متعلقہ افراد کو داخل نہيں ہونے دے گا۔ نظر رکھی جائے گی کہ جو ووٹ گنے گئے ہيں اتنے ہی آگے بتائے جائيں۔ ہيلپ لائن پر آئي ايس پي آر کے نمائندے مدد کيلئے موجود ہوں گے اگر کوئي بے ضابطگی نظر آئے تو فوج اور اليکشن کميشن کو آگاہ کريں۔

پریس کانفرنس کے دوران ڈی جی آئی ایس پی آر نے سوال اٹھایا کہ کس اليکشن سے پہلے دھاندلی کا شور نہيں مچا؟۔ ہماری کوئي سياسي جماعت اور مفاد نہيں ہے۔ جتنے ووٹ ڈالے جائيں گے اتنا ہي شفاف اليکشن ہوگا۔ پہلے ایسا سیاسی ماحول نہیں تھا۔2013 میں امیدواروں کوانتخابی مہم کےدوران دھمکیاں ملتی تھیں اور سیاسی جماعتیں ایک دوسرےکونیچادکھانےکےلیے حربےآزماتی تھیں۔ فوج نےایسا ماحول دیاجہاں کھل کرانتخابی مہم چلانےکی اجازت ہے۔ پولنگ والےدن تمام لوگ اپنےآپ کومحفوظ سمجھیں گے۔

مسلم لیگ ن کے باغی رہنما چوہدری نثارکو جیپ کا انتخابی نشان الاٹ کیے جانے کے بعد ان کے فوجی پس منظر کے باعث سامنے آنے والی قیاس آرائیوں سے متعلق ڈی جی آئی ایس پی آر نے نام لیے بغیر واضح کیا کہ ہرجیپ فوج کی نہیں ہوتی۔ فوج نےجیپ کانشان کسی امیدوار کونہیں دیا،یہ الیکشن کمیشن کاکام ہے۔ جس جیپ کو بطور انتخابی نشان دیاگیا وہ امیدوار استعمال کرتےہیں۔ انہوں نے میڈیا سے درخواست کی کہ ہربات کو فوج سے نہ جوڑا جائے۔

انہوں نے کہا کہ دہشتگردي کيخلاف جنگ ميں آئي ايس آئي کا اہم رول ہے۔جنرل فيض کے کردار کو گنوایا نہیں جاسکتا۔ انہوں نے کہا کہ دہشتگردي کيخلاف جنگ ميں آئي ايس آئي کا اہم رول ہے۔جنرل فيض کے کردار کو گنوایا نہیں جاسکتا۔جو نام ليتے ہيں انہيں پتا ہي نہيں جنرل فيض نے کيا کام کيا۔ دہشتگردي کےخلاف ہرعمل ميں جنرل فيض کا کردار ہے،سب کچھ اس ليے برداشت کررہے ہيں کہ ہميں پتا ہے جانا کدھرہے۔ کيا ہر ووٹرکےپاس جاکرآئي ايس آئي کہہ رہي کہ فلاں کو ووٹ ڈالو ؟ سياسی طریقہ کار کو اسی حد تک رہنے ديں۔ جہاں اتنا برداشت کيا ہے،25 جولائی تک برداشت کريں گے۔ہر الزام کي طرح يہ الزامات بھی دم توڑ جائيں گے۔

لیگی امیدوار اقبال سراج کو مبینہ دھمکیوں اور کاربار بند کرانے کے الزام سے متعلق بات کرتے ہوئے میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ ايک خط کی بنياد پر دھاندلي کا مسئلہ نہيں اٹھايا جاسکتا۔ گودام پر چھاپے ميں آئي ايس آئي کا کوئي بندہ ملوث نہيں تھا۔

ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کے داماد کو ایک سال قید بامشقت کی سزا سے متعلق آصف غفور نے کہا کہ کیپٹن صفدرکوسول کورٹس سے سزاہوئی ہے۔ اگرمعاملہ فوج تک پہنچا تو قواعد کےمطابق دیکھا جائےگا۔

خلائی مخلوق سے متعلق سوال کا جواب دیتے ہوئے بولے کہ ہم سیاست میں ملوث نہیں ہیں، ہمیں پتہ ہے ہم کیسی مخلوق ہیں۔ہم رب کی مخلوق ہیں اور وطن کیلئے جان کانذرانہ پیش کرتے ہوئے اپنی ڈیوٹی پیش کریں گے۔خلائی مخلوق بھی سیاسی نعرہ ہے۔ہم سیاست میں ملوث نہیں ہیں۔یہ وقت بتائے گا کہ ہم کیسی مخلوق ہیں۔یہ بھی واضح کیا کہ پاکستان کے لوگ مسٹر اے ،بی ،سی ،ڈی، ایف کو منتخب کریں، جو منتخب ہوگا وہی وزیراعظم ہوگا،جسے عوام لائیں گے۔

pak army

DG ISPR

elections 2018

Major General Asif Ghafoor

#GE2018

Tabool ads will show in this div