سپریم کورٹ نےنجی اسکولوں کوسرکاری تحویل میں لینےکاعندیہ دےدیا

 

سپریم کورٹ نے نجی اسکولوں کو سرکاری تحویل میں لینے کا عندیہ دے دیا۔چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ نجی اسکول فی بچہ چالیس ہزار روپے لے رہے ہیں،یہ کہاں کا انصاف ہے۔ چیف جسٹس نےمزیدریمارکس دیےکہ بعض افراد کو نوازنے کے لیے سرکاری اسکولوں کی حالت بہتر نہیں کی جارہی۔

خیبرپختونخوا کے نجی اسکولوں کو لینے کے دینے پڑ گئے۔گرمیوں کی چھٹیوں کی فیس آدھی لینے کے حوالے سے پشاور ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا۔ عدالت عالیہ کا حکم تو معطل نہ ہوالیکن سپریم کورٹ نے الٹا بھاری بھرکم فیسوں پرنوٹس لے لیا۔

پرائیویٹ اسکولوں کے وکیل سلمان اکرم راجہ کا کہنا تھا کہ دو ماہ فیس نہ لیں تواسکول دیوالیہ ہوکر ستمبر،اکتوبرمیں بند ہوجائیں گے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ نجی اسکول منافع ضرور لیں لیکن فی بچہ 40 ہزار کہاں کا انصاف ہے۔سرکاری اسکولوں کو بہترنہ کرکے بعض لوگوں کو نوازا جارہا ہے۔

اسکول گرمیوں کی فیس وصول کرسکتےہیں،سپریم کورٹ

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ریاست آرٹیکل 25 اے کے تحت نجی اسکولوں کو تحویل میں لے یا بچوں کی  فیس خود ادا کرے۔عدالت نے نجی اسکولوں کے خرچے پرانگریزی اور اردو اخبارات میں پبلک نوٹس شائع کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت 12جولائی تک ملتوی کردی۔

Tabool ads will show in this div