عمران خان کے کاغذات نامزدگی پھر چیلنج

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/06/imran-khan-nomination-pprs-challange.mp4"][/video]

لاہور میں پاکستان تحریک انصاف کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 131 سے کاغذات نامزدگی کی منظوری کو چیلنج کردیا گیا ہے۔ کاغذات کے خلاف ایڈووکیٹ مدثر چوہدری نے ایپلٹ ٹریبونل میں اپیل دائر کی۔

اپیل سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی پارٹی جسٹس اینڈ ڈیموکریٹک کے رہنما ایڈووکیٹ مدثر چوہدری کی جانب سے دائر کی گئی۔ اپیل میں این اے ایک سو اکتیس سے عمران خان کے کاغذات منظور کرنے کے ریٹرننگ افسر کے فیصلے کو چیلنج کیا گیا۔ اپیل میں کہا گیا ہے کہ عمران خان نے کاغذات نامزدگی میں اپنی بیٹی کا ذکر نہیں کیا۔

درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ ریٹرننگ افسر نے ہمارا مؤقف سنے بغیر عمران خان کے کاغذات منظور کیے۔ اپیل کنندہ کا مؤقف تھا کہ عمران خان صادق اور امین نہیں ہیں، وہ دستاویزات سمیت خود پیش ہو کر الزامات کا سامنا کریں۔ درخواست گزار نے ٹریبونل سے اپیل کی کہ عمران خان کے کاغذات نامزدگی مسترد کیے جائیں۔

واضح رہے کہ کاغذات نامزدگی منظور یا مسترد ہونے کیخلاف اپیلیں دائر کرنے کا آج بروز جمعہ آخری دن ہے۔

دوسری جانب این اے 53 اسلام آباد سے عمران خان کے کاغذات مسترد ہونے کے خلاف آج سماعت ہوگی۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے اپیلٹ ٹربیونل نے گزشتہ روز ریٹرننگ افسر کو نوٹس جاری کرتے ہوئے تمام ریکارڈ طلب کیا تھا۔ سماعت کے دوران عمران خان کی جانب سے وکیل بابر اعوان نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ان کے کاغذات کمزور بنیاد پرمسترد کر دیئے گئے۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے استفسار کیا کہ ریٹرننگ افسر (آر او) نے عمران خان کو کیوں نااہل قرار دیا ؟ جس پر بابر اعوان نے جواب دیا کہ کاغذات نامزدگی میں درخواست گزار نے حقائق چھپائے نا غلط بیانی کی، عمران خان کے خلاف آر او کا فیصلہ غیر منصفانہ ہے۔ دریں اثناء جسٹس اینڈ ڈیموکریٹک پارٹی کے جنرل سیکر یٹری عبدالوہاب بلوچ نے عمران خان کے کراچی کے حلقہ این اے 243 سے کاغذات کی منظوری کو الیکشن ٹربیونل میں چیلنج کر دیا۔

PTI

IMRAN KHAN

ELECTIONS2018

NA131

Tabool ads will show in this div