کاغذات نامزدگی فارم میں تبدیلی، سپریم کورٹ سماعت کا آغاز کرے گی

کاغذات نامزدگی فارم میں تبدیلی کا معاملے پر سپریم کورٹ آج بدھ کو الیکشن کمیشن اور ایاز صادق کی اپیلوں پر سماعت کرے گی۔

اس سے پہلے سپریم کورٹ نے معاملے کی سماعت کیلیے لارجر بینچ تشکیل دیا تھا۔ پانچ رکنی بینچ کی سربراہی چیف جسٹس خود کریں گے ۔۔ لاہور ہائی کورٹ نے نئے کاغذات نامزدگی فارم کو کالعدم قرار دیا تھا۔

لاہور ہائیکورٹ نے آئینی ترمیم کے بعد بننے والے نئے نامزدگی فارم کو کالعدم قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن پاکستان نئے کاغذات تیار کرنے کی ہدایت کی تھی، سپریم کورٹ نے ابتدائی سماعت میں عدالت عالیہ کا فیصلہ معطل کردیا تھا۔

تفصیلات جانیے : الیکشن کمیشن کا لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے پر سپریم کورٹ جانے کا اعلان

ایاز صادق اور الیکشن کمیشن نے لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے پر سپریم کورٹ میں اپیلیں دائر کی تھیں، جس پر عدالت عظمیٰ نے کل سماعت کیلئے چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں 5 رکنی لارجر بنچ تشکیل دے دیا۔

مزید جانیے : کاغذات نامزدگی میں تبدیلی، ایاز صادق کا سپریم کورٹ جانے کا اعلان

سپریم کورٹ کے لارجر بینچ میں جسٹس ثاقب نثار کے علاوہ جسٹس شیخ عظمت سعید، جسٹس مشیر عالم، جسٹس مظہر عالم اور جسٹس سردار طارق شامل ہیں۔

لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے پر سیاسی جماعتوں نے بھی تحفظات کا اظہار کیا تھا، پیپلزپارٹی کا مؤقف تھا کہ پارلیمنٹ کی ترامیم کی بنیاد پر بنائے گئے کاغذات نامزدگی کے تحت سینیٹ انتخابات کا انعقاد ہوا تھا۔

نامزدگی فارم میں مجموعی طور پر 19 شقیں ختم کی گئیں۔ ان شقوں میں دہری شہریت کی شق بھی شامل ہے۔

آخری تین سال کی انکم ٹیکس کی تفصیلات فراہم کرنے کی شق بھی ختم کردی گئی۔

ایگریکلچر ٹیکس کی تفصیلات فراہم کرنے کی شق، غیر ملکی ٹورز کی تفصیلات اور کریمنل کیسز سے متعلق شق، یوٹیلٹی بلز کی ادائیگی اور ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد سے متعلق حلف نامہ کی شق، بیوی اور بچوں کی تفصیلات اور تعلیم سے متعلق شق، موجودہ پیشے کی تفصیلات اور پہلے سے ممبر قومی و صوبائی اسمبلی ہونے کی صورت میں بڑے کام کی تفصیلات فراہم کرنے کی شق، قرضوں سے متعلق شق، اور غیر ملکی پاسپورٹ ہونے سے متعلق شق بھی ختم کی گئی ہے۔

ELECTION COMMISSION

Tabool ads will show in this div