مستونگ کالج میں طلبہ پر تشدد : گرفتار پرنسپل ، 6 طلبہ کیخلاف مقدمہ درج

May 16, 2018

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2018/05/Mastung-College-Follow-Up-Qta-Pkg-16-05.mp4"][/video]

رپورٹ : زین الدین

کیڈٹ کالج مستونگ میں طلبہ پر تشددکرنے پر کالج کے گرفتار پرنسپل اور چھ طلبہ کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا، پولیس کا کہنا ہے کہ سینئر طلبہ نے جونیئر طلبہ پر بدترین تشد دکالج انتظامیہ کے کہنے پر کیا۔

کیڈٹ کالج مستونگ میں طلبہ پر بد ترین تشدد کی ابتدائی تحقیقات مکمل کرلی گئیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ نویں اور دسویں جماعت کے طلبہ پر سیکنڈ ایئر کے طالبعلموں نے کالج انتظامیہ کے کہنے پر تشدد کیا۔

کالج انتظامیہ اور متاثرہ طلبہ کے بیانات کی روشنی میں کالج کے پرنسپل محمد اقبال بنگش اورسیکنڈ ایئر کے چھ طلبہ کے خلاف پولیس تھانہ سٹی مستونگ میں مقدمہ درج کرلیا گیا۔کالج پرنسپل کے بعدطالبعلم عنایت اللہ کو بھی گرفتار کرلیا گیا۔گرفتارپرنسپل کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا ہے۔

بلوچستان ہائی کورٹ میں طلبہ پر تشدد کے خلاف ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی جانب سے دائر کردہ درخواست کی سماعت کے دوران قائمقام ریجنل پولیس آفیسر اعتزاز گورائیہ نے عدالت کو بتایا کہ ویڈیو اور طلبہ کے بیانات کی روشنی میں نو ملزمان کی نشاندہی کرلی گئی ہے۔

چیف جسٹس بلوچستان ہائی کورٹ محمد نورمسکانزئی نے ریمارکس دیئے کہ تحقیقات مکمل ہونے سے قبل پرنسپل کو سزا دینے سے اساتذہ پر منفی اثر پڑے گا، کسی بے قصور کو سزا نہیں ملنی چاہیے۔

جسٹس ہاشم کاکڑ نے سیکرٹری کالجز اور آرپی اوپولیس کو ہدایت کی کہ کالج کا دورہ کرکے طلباء کے خوف کو ختم کریں۔چیف جسٹس خود بھی اگلے ہفتے کیڈٹ کالج مستونگ کا دورہ کریں گے۔

cadet college

mustang

Tabool ads will show in this div