ویکسین ضیاع اسکینڈل، تحقیقات میں اندر کی کہانی بے نقاب

اسٹاف رپورٹ

اسلام آباد : ای پی آئی ویکیسن اسکینڈل میں نئے انکشافات سامنے آئے ہیں، کروڑوں روپے کی ویکیسن محکمے میں گروہ بندی کی بھینٹ چڑھ گئی، سارا ملبہ چھوٹے ملازمین پر ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

کروڑوں کی ویکسین ای پی آئی افسران کی گروپ بازی کے باعث تباہ ہوئی، اندر کے ذرائع نے اصل کہانی بے نقاب کردی، عالمی ادارہ صحت سے ڈیپوٹیشن پر آنے والے اور ای پی آئی کے ریگولر افسران میں رسہ کشی چل رہی تھی، دونوں گروپوں نے ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کیلئے قومی دولت ضائع کردی۔

ای پی آئی ذرائع نے سماء کو بتایا ہے کہ ایک گروپ نے دوسرے کے پاس موجود ویکسین کے فریج بند کردیئے، لگاتار 2 ہفتے ویک اینڈ پر جنریٹر کے سوئچ بند کردیئے گئے، کولڈ اسٹوریج میں پڑی 33 لاکھ ڈالر کی 13 لاکھ خوراکیں مطلوبہ ٹمپریچر نہ ہونے کی وجہ سے ضائع ہوگئیں۔

ذرائع کے مطابق حکومت، ڈبلیو ایچ او اور دیگر اداروں سے ڈیپوٹیشن پر آئے افسران کو بچانے کیلئے سارا ملبہ ای پی آئی کے چھوٹے اہلکاروں پر ڈالنے کی کوشش کررہی ہے، ایف آئی اے نے معاملے کی تحقیقات تیز کردی ہے۔ سماء

تحقیقات

Narendra Modi

اسکینڈل،

tigers

Tabool ads will show in this div