بھارت،مختلف ریاستوں میں ریت کا طوفان150 افراد ہلاک

New Delhi: Women walk along Rajpath during a dust storm in New Delhi on Wednesday. PTI Photo by Arun Sharma (PTI5_2_2018_000140B)
New Delhi: Women walk along Rajpath during a dust storm in New Delhi on Wednesday. PTI Photo by Arun Sharma (PTI5_2_2018_000140B)
New Delhi: A man rides motorcycle during a dust storm in New Delhi on Wednesday. PTI Photo by Arun Sharma (PTI5_2_2018_000139A)
New Delhi: A man rides motorcycle during a dust storm in New Delhi on Wednesday. PTI Photo by Arun Sharma (PTI5_2_2018_000139A)

بھارت کی شمالی اور مغربی ریاستوں میں ریت کے طوفان نے ہر طرف تباہی مچادی۔ مختلف حادثات میں 150 سے زائد افراد ہلاک، جب کہ 200 سے زائد زخمی بھی ہوئے۔ راجستھان اور اترپردیش میں درجنوں فلائٹس بھی متاثر، جب کہ مختلف حادثات میں 160 مویشی بھی ہلاک ہوئے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی اور بھارتی ذرائع ابلاغ سے جاری خبروں کے مطابق بھارت کی شمال اور وسطی ریاستوں میں چلنے والی زور دار آندھی اور ریت کے طوفان نے ہر طرف تباہی مچا دی۔ زیادہ تر ہلاکتیں چھتیں یا پلر گرنے کے باعث ہوئیں۔ طوفان کے باعث اکثر سڑکوں پر ٹریفک جام جب کہ فلائٹ شیڈول بھی متاثر ہوا، کئی پروازوں کو دیگر شہروں کی جانب موڑ دیا گیا۔

 

مختلف شہروں میں 130 کلومیٹر فی گھنٹے کی رفتار سے چلنے والی رتیلی ہواؤں نے درختوں کو جڑ سے اکھاڑ دیا اور کئی گھروں کی چھتیں بھی گر گئیں۔ بجلی کے پول اور سائن بورڈز گرنے سے بھی متعدد افراد زخمی ہوئے۔ حکومتی ہدایت کے بعد ترجیحی بنیادوں پر زخمیوں کو علاج معالجے کی سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں۔

بھارتی حکام کے مطابق یوپی کے 40 اضلاع میں طوفان کے باعث پینسٹھ افراد ہلاک ہوئے، راجستھان میں تیس سے زائد افراد کی ہلاکتوں کی تصدیق کی گئی ہے۔ حکام کے مطابق اس قدرتی آفت کے باعث کئی علاقوں میں بجلی کا نظام بھی درہم برہم ہو کر رہ گیا ہے۔ تین سو کے قریب بجلی کے کھمبے بھی گر چکے ہیں۔

طوفان کے باعث اتر پردیش کے چالیس سے زائد اضلاع متاثر ہوئے، یہ وہ ہی ریاست ہے جہاں مغلیہ دور حکومت کے بادشاہ شہنشاہ جہانگیر کے عہد میں تعمیر کیا جانے والا عالمی شہرت کا حامل تاج محل واقع ہے۔ اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ یوگی ادیتہ ناتھ نے امدادی اداروں کے اہلکاروں کو متاثرین کی ہر ممکن امداد فراہم کرنے کا حکم دیا ہے، جب کہ  وزیر اعلیٰ خود تمام امدادی آپریشن کی ذاتی طور پر نگرانی بھی کر رہے ہیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق اسپتال ذرائع نے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی جانب سے طوفان سے ہلاک ہونے والے کیلئے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا گیا۔

 

بھارتی محکمہ موسمیات نے آئندہ 35 گھنٹوں میں مزید طوفان کی پیش گوئی کی ہے۔ پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق مون سون کی بارشوں کا سلسلہ شروع ہونے میں ابھی 6 ہفتے باقی ہیں، تاہم ریت کے طوفان کی تباہی کے باعث لوگ خوف زدہ ہیں۔

بھارتی حکومت کی جانب سے راجھستان میں ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین کیلئے چار چار لاکھ روپے امداد کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔ ریلیف کمشنر سنجے کمار نے بتایا کہ اترپردیش کے شمالی شہر آگرہ میں تباہی کے اثرات انتہائی خطرناک ہیں جہاں لوگوں کے کچے گھر تیزہواؤں کے باعث مہندم ہو گئے اور بعض مقامات پر پر آسمانی بجلی گرنے کے واقعات بھی پیش آئے۔

MET OFFICE

UP

Dust storm

Tabool ads will show in this div