شہباز شریف نہیں چاہتے تھے کہ مریم لیڈر بنے، زبیر محمود

لاہور : شہباز شریف نہیں چاہتے تھے کہ مریم لیڈر بنے، تہمینہ درانی کے سابق سیکریٹری نے اپنی کتاب میں سنسنی خیز انکشافات کردیے، کہتے ہیں کہ چوہدری نثار اور شہباز شریف کے درمیان 2 درجن سے زائد ملاقاتیں ہوئیں، سابق وزیر داخلہ، وزیراعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر چل رہے ہیں۔

زبیر محمود وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی اہلیہ تہمینہ درانی کے چار سال تک سیکریٹری رہے، ان کا تعلق پشاور سے ہے۔

   

سماء سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کی اہلیہ تہمینہ درانی کے سابق سیکریٹری زبیر محمود نے انکشاف کیا کہ چوہدری نثار علی خان کی پارٹی مخالفت طے شدہ تھی، وہ شہباز شریف کی ہدایت پر چل رہے ہیں، وزیراعلیٰ پنجاب نہیں چاہتے تھے کہ مریم نواز پارٹی لیڈر بنیں۔

سماء کے نمائندہ نعیم اشرف بٹ کو انٹرویو میں انہوں نے بتایا کہ تہمینہ درانی کے گھر پر شہباز شریف اور نثار علی خان کی 2 درجن سے زائد ملاقاتیں کیں، میڈم مجھ سے ملاقاتوں کا احوال شیئر کرتی تھیں، سابق وزیر داخلہ اور تہمینہ درانی نے وزیراعلیٰ پنجاب کو مستعفی ہونے کا مشورہ دیا، شہباز شریف نے کہا، پس پردہ رہ کر راستہ بناؤں گا۔

پشاور سے تعلق رکھنے والے زبیر محمود کہتے ہیں کہ تہمینہ درانی سے ٹیکسٹ میسجز اور فون ریکارڈ میرے پاس ہے، میڈم کہتی تھیں یہ باتیں اور میسجز محفوظ کرو، 10 سال بعد لکھنا، میں نے تھوڑی جلدی کی، 4 ماہ میں کتاب شائع ہوجائے گی، جو دیکھا اور جانا، سب کچھ کتاب میں لکھ دیا۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ شہباز شریف کا وزیر اعظم بننے کا خواب پورا نہیں ہوگا، کوئی بھی بات محترمہ نے مجھ سے نہیں چھپائی، ڈان لیکس اور دیگر اندرونی اختلافات پر بھی بات ہوتی تھی۔

پرویز رشید کا زبیر محمود کے دعووں پر ردعمل

سماء کے پروگرام پوسٹ مارٹم میں گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے سینیٹر پرویز رشید نے زبیر محمود کی کتاب میں کئے گئے دعوؤں پر اپنا رد عمل دینے سے انکار کردیا، بولے کہ زبیر محمود کو جانتا ہوں نہ کبھی ملا۔

چوہدری نثار علی کی پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت سے متعلق سوال پر ان کا کہنا تھا کہ میں مفرضوں پر بات نہیں کرتا۔

بیورو چیف لاہور احمد ولید کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن میں بہت سے لوگ شہباز شریف کے پالیسی سے اتفاق نہیں کرتے، کچھ لوگ مریم کو آگے لانا چاہتے تھے جبکہ کچھ لوگ اس کے خلاف تھے، جس سے واضح ہوتا ہے کہ پارٹی میں اندورنی طور پر اختلافات تھے، شہباز شریف مریم کی جگہ حمزہ کو آگے لانا چاہتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ اختلافات اس وقت کھل کر سامنے آئے جب این اے 120 کی انتخابی مہم کے موقع پر حمزہ بیرون ملک چلے گئے، جس کے بعد مریم کو اپنی والدہ کلثوم نواز کی انتخابی مہم چلانے کیلئے آگے لایا گیا۔

تجزیہ کار حماد غزنوی کہتے ہیں کہ چوہدری نثار اور نواز شریف کے درمیان اختلافات کا آغاز سابق وزیراعظم کو نااہلیت پر گھر جانے کا مشورہ دینے پر ہوا، نثار نے انہیں کہا تھا کہ جی ٹی روڈ پر احتجاج نہ کریں بلکہ خاموشی سے گھر چلے جائیں۔

Chohadry Nisar

MARYAM NAWAZ

Zubair Mehmood

Tabool ads will show in this div