وزیراعظم اورعسکری قیادت سے ملاقات حالات کی بہتری سے مشروط،طالبان کوحکومتی جواب

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹ


اسلام آباد : حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے وزیراعظم، آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی سے طالبان کمیٹی کی ملاقات حالات کی بہتری سے مشروط کردی، طالبان شوریٰ کے مطالبات پر تحریری جواب بھجوا دیا گیا، وزیر مملکت بلیغ الرحمان کہتے ہیں اگر طالبان رہنما بات چیت کیلئے اسلام آباد  آنا چاہیں تو مکمل سیکیورٹی دیں گے۔


سرکاری اعلامئے کے مطابق حکومتی کمیٹی کے اجلاس میں طالبان شوریٰ سے ملاقات کرنے والے طالبان کمیٹی کی رپورٹ پر تفصیلی غور کیا گیا اور انہیں آج صبح جواب بھجوا دیا گیا۔


ذرائع کے مطابق حکومتی کمیٹی کا کہنا ہے کہ مذاکرات اور دہشت گردی کی کارروائیاں ساتھ نہیں چل سکتیں، سیز فائر میں مثبت پیشرفت ہونے پر اعلیٰ قیادت سے ملاقات کا اہتمام کیا جاسکتا ہے، طالبان سے کہا گیا ہے کہ وہ مذاکرات کے دوران دہشت گردی کرنے والوں کی نہ صرف نشاندہی کریں بلکہ سرکوبی کیلئے حکومت سے تعاون بھی کریں۔


وزیر مملکت برائے داخلہ بلیغ الرحمٰن کا کہنا ہے کہ امن مذاکرات میں مثبت پیشرفت ہورہی ہے، اب اگر میزائل حملہ ہوا تو پاکستان اسے اچھی نگاہ سے نہیں دیکھے گا، حکومتی ٹیم کے وزیرستان جانے یا طالبان رہنماؤں کے اسلام آباد آنے میں مسئلہ نہیں۔


ذرائع کا کہنا ہے کہ طالبان شوریٰ نے حکومت سے مطالبہ کیا تھا کہ آئین میں موجود اسلامی دفعات پر فوری عمل کیا جائے اور مزید ترمیم کی جائے، اسلامی نظریاتی کونسل کی سفارشات پر جلد قانون سازی ہونی چاہئے۔


طالبان شوریٰ نے حکومت سے سوال کیا تھا کہ ان کے مطالبات پر کب اور کیسے عمل ہوگا؟ جبکہ معاہدے کے مستقبل کی گارنٹی کیا ہوگی؟۔ سماء


 

کی

سے

eid

puppet

solution

shutdown

opposes

Tabool ads will show in this div