فاروق ستار نے غلطی تسلیم کرتے ہوئے معافی مانگ لی

کراچی : ڈاکٹر فاروق ستار نے غلطی تسلیم کرلی، کہتے ہیں پارٹی آئین تبدیل کرنا زندگی کی سب سے بڑی غلطی تھی، اس پر معافی مانگتا ہوں۔ بولے کہ میئر کراچی کیخلاف عوام کی جانب سے بہت شکایات ہیں، وسیم اختر کو ہٹانے کا کارڈ استعمال نہیں کرنا چاہتا، گھر کا جھگڑا گھر ہی میں طے کیا جانا تھا، بہادرآباد والوں نے مجھے ہٹانے کی درخواست دے کر ہنڈیا بیچ چوراہے پر پھوڑدی ہے۔

ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے سماء کے پروگرام آواز میں گفتگو کرتے ہوئے تسلیم کرلیا کہ پارٹی آئین میں تبدیلی ان کی زندگی کی سب سے بڑی غلطی تھی، ساتھ ہی معافی بھی مانگ لیں، پارٹی آئین میں تبدیلی کسی کے مشورے پر کی تھی تاہم اس شخص کا نام نہیں بتاؤں گا، کامران ٹیسوری کے کہنے پر پارٹی آئین میں تبدیلی نہیں کی۔

ان کا کہنا ہے کہ میئر کراچی کیخلاف عوام کی جانب سے بہت شکایات آتی تھیں، میں نے آج تک وسیم اختر کو کچھ نہیں کہا، میئر کراچی کو ہٹانے کا کارڈ استعمال نہیں کرنا چاہتا، دیکھنا ہوگا اختیارات اور وسائل کا رونا ہے یا نااہلی؟۔

ڈاکٹر فاروق ستار کہتے ہیں کہ جنرل اسمبلی اجلاس رابطہ کمیٹی تحلیل کرنے کیلئے نہیں بلایا تھا، صرف کارکنوں کی رائے لینا چاہتا ہوں، گھر کا جھگڑا گھر ہی میں طے کیا جانا تھا، لیکن اب ہنڈیا بیچ چوراہے پر پھوٹ گئی ہے، مانتا ہوں جو کچھ ہورہا ہے اس کے اثرات اچھے نہیں، کنوینر بننا میرا مسئلہ نہیں، ایک دن بہادر آباد مرکز ضرور جاؤں گا۔

ایم کیو ایم پاکستان سربراہ کا کہنا ہے کہ پارٹی میں وڈیرا شاہی ختم کرنا چاہتا ہوں، پارٹی میں احتساب اور ریفارمز ہونے چاہئیں، ایک پتہ میں نے اپنے پاس رکھا ہوا ہے، سینیٹ انتخابات کے مسئلے کا حل میرے پاس موجود ہے، عامر خان سے میری کوئی خفیہ ملاقات نہیں ہوئی، اطلاعات ہیں حقیقی کے لوگ تیزی سے واپس آرہے ہیں۔ سماء

coordination committee

RC

Dr. Farooq Sattar

Tabool ads will show in this div