زینب قتل کیس؛شاہدمسعودکےالزامات؛جےآئی ٹی قائم

اسلام آباد: اینکر پرسن ڈاکٹرشاہد مسعود کےزینب قتل کیس کے متعلق الزامات پرسپریم کورٹ نے جےآئی ٹی قائم کردی ہے۔ جےآئی ٹی ایک ماہ میں رپورٹ پیش کرےگی۔

سماءکےمطابق ڈاکٹرشاہد مسعود نے قصورمیں زینب قتل کیس کےحوالےسے ہولناک انکشافات اور الزامات عائد کئےتھے۔ شاہد مسعود کوعدالت نے الزامات ثابت کرنےکےلیے عدالت طلب کیالیکن وہ مکر گئے اور کہنے لگے کہ ابھی ثبوت نہیں ساتھ لایا۔

شاہدمسعودکادعوی غلط،زینب کےقاتل کاکوئی بینک اکاؤنٹ نہیں،اسٹیٹ بینک

ڈاکٹرشاہدمسعودکےالزامات کی تحقیقات کےلیے سپریم کورٹ نے3رکنی جے آئی ٹی قائم کردی ہے۔ جےآئی ٹی کے سربراہ ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن ہوں گے۔ جےآئی ٹیم میں جوائنٹ ڈائریکٹرآئی بی انورعلی کوشامل کیاگیاہے۔ان کے علاوہ اےآئی جی اسلام آبادعصمت اللہ جونیجو بھی جے آئی ٹی کا حصہ ہونگے۔

قاتل عمران سےمتعلق شاہدمسعودکاجھوٹادعوی

سپریم کورٹ نےجے آئی ٹی کوایک ماہ میں تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ پیش کرنے کاحکم دےدیاہے۔ سپریم کورٹ نےجے آئی ٹی کو اینکرپرسن کےالزامات پر واضح رپورٹ پیش کرنے کاحکم بھی دیاہے۔

ڈاکٹر شاہد مسعود کا دعویٰ پنجاب حکومت نے بھی مسترد کردیا

سپریم کورٹ نے ہدایت کی ہےکہ تحقیقات کیلئےاسٹیٹ بینک سمیت دیگرماہرین کی خدمات حاصل کی جاسکیں گی۔ جے آئی ٹی ڈاکٹر شاہد مسعودکا بیان بھی ریکارڈ کرےگی۔ عدالتی حکم کے تحت ڈاکٹرشاہد مسعود جے آئی ٹی کو تمام شواہدپیش کرسکتے ہیں۔  سماء

JIT

zainab murder case

Shahid Masood

Tabool ads will show in this div