زینب قتل کیس؛ مظاہرین پر فائرنگ کرنے والے پولیس اہلکار گرفتار

لاہور: زينب قتل کيس ميں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے اب تک دس مشتبہ افراد کو حراست ميں لے ليا، جبکہ مظاہرین پر سیدھی فائرنگ کرنے والے پولیس اہلکار بھی گرفتار کرلیے گئے۔


کابينہ کميٹي کے اجلاس ميں وزيراعليٰ پنجاب شہباز شریف کو آئي جي پنجاب عارف نواز نے بريفنگ دي۔ آئي جي پنجاب نے بتايا کہ حساس ادارے ملزم کي نشاندہي ميں مدد کررہے ہيں۔ شہبازشريف نے ملزم کا چالان پيش کرنے کے لئے پوليس کو اڑتاليس گھنٹے کي مہلت دے دي۔

زینب کےساتھ زیادتی کی تصدیق؛پوسٹ مارٹم رپورٹ میں ہولناک انکشافات

آئی جي پنجاب عارف نواز نے دعويٰ کیا ہے کہ جلد اصل ملزم قانون کي گرفت ميں ہوگا، جبکہ سي سي ٹي فوٹيج کي مدد سے زينب قتل کيس کي تفتيش جاري ہے۔ آئي جي پنجاب نے بتایا کہ مرکزي ملزم تک پہنچنے کے لئے ڈي اين اے رپورٹ کا انتظار ہے۔

اجلاس میں شہبازشريف نے مظاہرين پر فائرنگ کرنے پر پوليس کي سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ سيدھي فائرنگ کا کوئي جواز نہيں بنتا تھا۔

پنجاب حکومت نے مظاہرين پر گولياں چلانے والے چار پوليس اہلکاروں کو گرفتار کرکے ان کي تصاوير جاري کردي ہيں۔ سماء

POLICEMEN

IG punjab

zainab murder case

straight firing

Tabool ads will show in this div